Balochistan Liberation Army Commander In Chief Basheer Zeb's Message To The Baloch Nation Asking For A general Mobilization Against Occupying Pakistan. | NewsComWorld.com

Balochistan Liberation Army Commander In Chief Basheer Zeb’s Message To The Baloch Nation warns of an intense “war against Pakistan” and invites Baloch youth to join it.

During a recent siege, 16 highly trained Baloch Freedom Fighters of Majeed Brigade carried out Operation Ganjal. 9 Baloch Freedom Fighters were involved in the Noshki attack, whereas 7 Baloch Freedom Fighters took part in Panjgur attack. The Baloch Freedom Fighters took control of two different camps of Pakistani forces and eliminated more than 195 personnel of enemy and injured several more. Three officers of the Pakistan Army were also killed.

We covered this attack by Balochistan Freedom Fighters on occupying Punjabi Pakistani Forces in details in our previous article Is Pakistan’s Occupation of Balochistan viable anymore?

Thereafter, Baloch Liberation Army has released a video message of its leader Basheer Zeb on its Telegram channel. The message is in Brahui language and Balochistan Liberation Army Commander-In-Chief Basheer Zeb warns of an intense “war against Pakistan” and invites Baloch youth to join it.

Balochistan Liberation Army Commander In Chief Basheer Zeb's Message To The Baloch Nation Asking For A general Mobilization Against Occupying Pakistan. | NewsComWorld.com
Balochistan Liberation Army Commander In Chief Basheer Zeb’s Message To The Baloch Nation Asking For A general Mobilization Against Occupying Pakistan.

The leader, Commander-In-Chief, Basheer Zeb of the Baloch Liberation Army (BLA) faction that carried out the recent Inghimasi-style attacks, is seen in a new video.

He is flanked by fighters very well armed with Afghan-origin hardware; M4 Carbine/ACOG/PEQs, and a M32A1 MGL.

Here is the link to the Video on YouTube:-

Here is a link to the video on rumble.com:-

https://rumble.com/vuds4v-bla-commander-in-chiefs-message-for-baloch-nation-balochi.html

We are posting here both the Urdu as well as English translation of the transcript for our readers. Please note that the original message in the video was in local Brahui language.

بلوچ لبریشن آرمی کمانڈر انچیف،
بشیر زیب بلوچ کا بلوچ قوم کے نام پیغام
سب ٹائٹل:
دنیا کے اقوام کے حوالے سے اگر کوئی تاریخ دیکھے تو تمام اقوام کے سامنے دو راستے آئے ہیں۔ ایک اس قوم نے اپنے اوپر جبر، غلامی اور قبضے کو قبول کیا ہے اور دوسری وہ اقوام جنہوں نے اسے قبول نہیں کیا ہے، سر نہیں جھکایا ہے اور غلامی کے خلاف جدوجہد کی ہے، اپنی آزادی کی خاطر مزاحمت کی ہے۔

Balochistan Liberation Army Commander In Chief Basheer Zeb’s Message To The Baloch Nation

Subtitles:

With regard to the nations of the world, if one looks at history, all nations have come across two paths. One is that nation that has accepted oppression, slavery and occupation over itself and the other is that the nations which have not accepted it, have not bowed their heads and have struggled against slavery, have resisted for their freedom.

آج اگر بلوچ قوم کی تاریخ دیکھیں تو جس دور سے بلوچ غلام بنایا گیا ہے بلوچ نے مزاحمت کی ہے، بلوچ نے جنگ کی ہے، بلوچ نے قومی غلامی قبول نہیں کی ہے، بلوچ نے باہر سے آئے ہوئے یلغار کو، دشمنوں کو قبول نہیں کیا ہے۔ بلوچ نے سر نہیں جھکایا ہے بلکہ سر اٹھا کر اپنی قومی آزادی کے لئے جنگیں لڑی ہے، جدوجہد کی ہے۔
آج یہ اسی جنگ کا تسلسل ہے۔ یہ جنگ کمزور نہیں ہوئی بلکہ یہ مضبوط ہو رہی ہے۔ یہ جنگ شعوری شکل اختیار کر رہی ہے۔

If we look at the history of the Baloch nation today, from the time when Balochs have been enslaved, Balochs have resisted, Balochs have fought, Balochs have not accepted national slavery, Balochs have not accepted the invasion from outside, the enemies. What is it. The Baloch have not bowed their heads, but have raised their heads and fought for their national liberation.

Today it is a continuation of that war. This war is not weakening, it is getting stronger. This war is taking conscious form.

ان بیس سالوں میں ایک وقت ایسا بھی تھا جب جہد کار دور سے دشمن پر چار گولیاں چلاتے، دشمن پر دور سے حملہ کرتے۔ آج بلوچ جہد کار، بلوچ نوجوان دشمن کے کیمپوں کے اندر گھس کر، دشمن کے مورچوں کے اندر گھس کر، اور دشمن کے ٹھکانوں کے اندر گھس کر وہی سے دشمن کو مارتے ہیں اور انہیں گھسیٹ کر نکالتے ہیں۔

There was a time in those twenty years when the fighters fired four shots at the enemy from a distance, attacking the enemy from a distance. Today, Baloch fighters, Baloch youth, by infiltrating the enemy’s camps, entering the enemy’s fronts, and entering the enemy’s strongholds, kill the enemy and drag them out.

یہ بلوچ جہد کا شعور ہے اور یہ بلوچ جہد کی شعوری شکل ہے۔ آج بلوچ ہر شکل میں جاری ہے۔ آج کوئی احتجاج کر رہا ہے، کوئی سڑکوں پر نکل رہا ہے، کوئی آواز اٹھا رہا ہے چاہے اسکی آواز میں کوئی مطالبہ ہے مگر یہ بھی مزاحمت ہے یہ دشمن کے خلاف ایک نفرت ہے۔

This is the consciousness of Baloch struggle and this is the conscious form of Baloch struggle. Today Baloch is going on in all its forms. Today someone is protesting, someone is taking to the streets, someone is raising a voice, even if there is a demand in his voice, but this is also resistance, this is a hatred against the enemy.

ہم اپنے لوگوں سے کہتے ہیں، اپنے قوم سے کہتے ہیں کہ آج نوجوان آپ کے لئے اپنی زندگیاں قربان کر رہے ہیں، اپنی جانیں قربان کر رہے ہیں، اپنے گھر قربان کر رہے ہیں، آج پہاڑوں میں در پہ در ہیں، جن تکالیف سے گزر رہے ہیں، یہ سب آپ لوگوں کے لئے ہیں۔ آج بلوچ ٹارچر سیلو میں دس دس سال، بیس بیس سال اذیت سہہ رہے ہیں لیکن سر نہیں جھکا رہے دشمن کے ہمکار نہیں بن رہے ہیں، پاکستان کو قبول نہیں کر رہے ہیں، دشمن انکو رہا نہیں کر رہا ہے، انہیں مار رہا ہے تشدد کر رہا ہے انکی لاشیں پھینکتا ہے، یہ سب آج تمہارے لئے ہو رہا ہے۔

We tell our people, we tell our people that today young people are sacrificing their lives for you, they are sacrificing their lives, they are sacrificing their homes, today they are in the mountains, Passing, it’s all for you guys. Today Balochs are suffering for ten years, twenty years in torture cells but they are not bowing their heads, they are not cooperating with the enemy, they are not accepting Pakistan, the enemy is not releasing them, they are killing them. Is throwing their bodies, all this is happening to you today.

کوئی اپنی زندگیوں سے اپنے جانوں سے اپنے بچوں سے بیزار ہو کر یہ نہیں کر رہا بلکہ یہ سب آپ (بلوچ قوم) کے لئے کر رہے ہیں۔ تو اگر کوئی اٹھ کر چالاکی اور مکاری سے، جھوٹ اور فراڈ سے، دھوکے سے، اس جہد کا رنگ تبدیل کرنے کی کوشش کرتا ہے، ان سے خیال کریں اور انکو سمجھیں۔ انکو سمجھنا ضروری ہے۔

No one is doing this out of disgust with their lives, their lives and their children, but they are doing all this for you (Baloch nation). So if someone gets up and tries to change the color of this struggle with cunning and deceit, lies and fraud, deception, think of them and understand them. It is important to understand them.

آج ہمارے وسائل کو نیلام کیا جا رہا ہے، بیچا جا رہا ہے۔ بد بختی تو یہ ہے کہ کوئی اٹھ کر بلوچ کے نمائندگی کے نام پر حصہ مانگتا ہے، فیصد طلب کرتا ہے۔ کوئی کہتا ہے 25 فیصد ہمیں دے دو تو کوئی کہتا ہے 50 فیصد ہمیں دو۔ تاریخ میں جب فاتحین نے کسی علاقے کو فتح کیا ہے، قبضہ کیا ہے لوٹ مار شروع کی ہے، آج یہ اسی کا حصہ ہے بس اسکا رنگ مختلف ہے۔

Today our resources are being auctioned off. It is unfortunate that someone gets up and asks for a share in the name of Baloch representation, asking for a percentage. Some say give us 25%, some say give us 50%. In history, when the conquerors have conquered an area, occupied it and started looting, today it is a part of it, but its color is different.

انہوں (قبضہ گیر) نے کبھی کسی کو اسکا حصہ دیا ہے؟ لوٹ مار کرنے والے، چور جب آتے ہیں کب کسی کو اسکا حصہ دیتے ہیں کہ آج ہم اس (پاکستان) سے یہ توقع کریں؟ یہ قوم کے لئے حصہ نہیں ہے، بلوچستان کے لئے حصہ نہیں ہے، یہ جو بھی حصہ مانگتے ہیں اپنے لئے مانگتے ہیں۔

Has he (the occupier) ever given a share to anyone? When looters, thieves come, when do they give a share to someone that we expect from this (Pakistan) today? This is not a part for the nation, this is not a part for Balochistan, whatever they ask for, they ask for themselves.

کوئی کہتا ہے ہم نہیں چھوڑینگے، یہ کرینگے وہ کرینگے، کوئی یہ نہیں کہتا کہ کیسے نہیں چھوڑینگے، کیسے روکینگے کس طریقے سے روکیںگے؟ تو ہم کہتے ہیں اسکا روکنا بغیر مزاحمت بغیر جنگ کے ممکن نہیں۔ اور ہمارے پاس یہی راستہ رہ گیا ہے۔

Someone says we will not give up, they will do it, they will do it, no one says how will not give up, how will they stop, how will they stop? So we say it is not possible to stop it without resistance without war. And that’s the only way we have.

ہمارا فرض ہے کہ ہم یہ باتیں بولیں، یہ باتیں کہیں کہ انکو سمجھو۔ ان مداریوں کو، ان دکانداروں کو سمجھو۔ کچھ تو ویسے ہی کتے بن گئے ہیں۔ انکی خصلتیں کتوں والی ہیں انکی عادتیں کتوں والی ہیں انکا سب کچھ کتوں جیسا ہے۔ بھونکتے بھی کتوں کی طرح ہیں قومی تحریک کے خلاف، وہ تو ظاہر ہیں، بلکہ ظاہر ہیں وہ پہچانے جاسکتے ہیں کہ وہ دشمن کا حصہ ہیں، وہ ہمارے دشمن ہیں۔

It is our duty to say these things, to say these things to understand them. Understand these orbits, these vendors. Some have become dogs just like that. They have dog-like traits, they have dog-like habits, they have everything like dogs. Even barking like dogs are against the national movement, they are obvious, they can be recognized that they are part of the enemy, they are our enemy.

کوئی بلوچ کے نام پر اگر ہمیں گمراہ کر رہا ہے، کوئی بلوچ کے نام پر ہمیں دھوکہ دے رہا ہے، انکو بھی ہمیں سمجھنے کی ضرورت ہے، ہمیں انکو بھی جاننے کی ضرورت ہے۔ آج افسوس، سد افسوس سے کہہ رہے ہیں کہ انکی گورنمنٹ ہوئی ہے، انہی کا دور حکومت ہوا ہے، وہیں وزیر اعلیٰ ہوئے ہیں، وہی سینیٹر ہوئے ہیں، پیپلز پارٹی سے لے کر مسلم لیگ تک، آیا انکے دور حکومت میں کوئی بلوچ لاپتہ نہیں ہوا ہے؟ آیا انکے دور میں کوئی لاش نہیں پھینکی گئی؟ کیا صرف مشرف کے دور میں لاشیں پھینکی گئی؟ مشرف کے دور میں تو لاپتہ افراد کی لاشیں نہیں پھینکی گئیں۔ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ کے دور میں (مسخ شدہ لاشیں پھینکنا شروع) ہوئی۔

If someone is misleading us in the name of Baloch, someone is deceiving us in the name of Baloch, we also need to understand them, we also need to know them. Today, sadly, Sad is saying with regret that he has had a government, he has had a government, he has been the Chief Minister, he has been a Senator, from the PPP to the Muslim League, is there any Baloch missing during his rule? Hasn’t happened Has no corpse been thrown in his time? Were the bodies dumped only under Musharraf? Under Musharraf, the bodies of missing persons were not dumped. During the era of PPP and Muslim League (started throwing mutilated bodies).

آج اگر بلوچ اٹھ کر اپنی فریاد لے کر انکے سامنے جاتے ہیں اور انکے سامنے روتے ہیں، اور یہ لاپتہ افراد کی بات کرتے ہیں؟ یہ ایک سنگین مسئلہ ہے۔ یہ کٹھ پتلی ہیں، جس دن انکو لات مار کر نکال دیا جاتا ہے یہ آکر تمہارے ہمدرد بن جاتے ہیں۔ ہم بھی انکو اپنا ہمدردی سمجھ لیں؟ اس دور میں اتنی سادگی، اتنی نا سمجھی؟ ان سب چیزوں پر ہمیں سوچنا چاہئے، ہمیں غور کرنا چاہئے۔ دیکھنا چاہیے کہ یہی چیزیں یہی تضاد آج دنیا کے سامنے ہمیں کیا پیش کر رہی ہیں، ہمیں کیا بتا رہی ہیں؟ ہم اپنی بات کیوں سیدھا سیدھا نہیں رکھتے، کیوں نہیں بتاتے؟ اگر آج ہم کوئی مطالبہ کر رہے ہیں تو ہمیں دنیا کو بتا دینا چاہیے۔

What if today the Balochs get up and go to them with their grievances and cry in front of them, and they talk about the missing persons? This is a serious problem. They are puppets, the day they are kicked out they come and become your sympathizers. Should we consider them as our sympathizers? So simple, so incomprehensible in this age? We should think about all these things, we should consider. We have to see what these same contradictions are presenting to the world today, what are they telling us? Why don’t we keep our word straight, why don’t we tell? If we are making any demands today, we must tell the world.

پنجابی کو نہیں بتائیں، پنجابی کون ہے کہ ہم اس سے فیصد مانگیں اس سے حصہ مانگیں۔ پنجابی ہے کون، اس سے ہمارا کیا تعلق ہے ہمارا کیا رشتہ ہے؟ بس ایک تعلق کے علاوہ، نا جائز تعلق کے علاوہ، ظالم و مظلوم کا تعلق ہے اور تو کچھ بھی نہیں ہے۔

Don’t tell Punjabi, who is Punjabi that we ask him for percentage and ask him for share. Who is Punjabi, what is our relationship with it, what is our relationship? There is nothing but a relationship, an illegitimate relationship, between the oppressor and the oppressed, and nothing more.

یہ تو ہمیں سمجھنا چاہیے کہ کیوں ہم اپنی بات الفاظ میں چھپا رہے ہیں؟ اسی وقت ہماری غلامی کی زنجیریں مضبوط ہو رہی ہیں، طاقتور ہو رہی ہیں۔ اسی میں ہمارے بہت سی چیزیں ہمارے ہاتھوں سے نکل رہی ہیں۔ ان چیزوں کو ہمیں سمجھنے کی ضرورت ہے انہی چیزوں کو ہمیں جاننے کی ضرورت ہے، ان چیزوں کے اوپر ہمیں غور کرنے کی ضرورت ہے کہ ہمارا اصل مرض کیا ہے؟ کیا ہے ہماری اصل تکلیف؟

We have to understand why we are hiding our words in words. At the same time, our chains of slavery are getting stronger, stronger. In this, many of our things are getting out of our hands. These are the things we need to understand, these are the things we need to know, these are the things we need to consider, what is our real disease? What is our real problem?

آج بیروزگاری ہے اسکی وجہ غلامی ہے، ہمارے لوگ بیماریوں کی وجہ سے مر رہے ہیں اسکی وجہ غلامی ہے، آئے دن سڑکوں پر ایکسیڈنٹ سے ہمارے لوگ مرتے ہیں اسکی وجہ غلامی ہے، آج آپس کی لڑائیاں ہو رہی ہیں، چھوٹے سے زمین کے ٹکڑے پر قتل و غارت ہو رہی ہے اسکی وجہ غلامی ہے، آج گھروں میں پانی نہیں ہے اسکی وجہ غلامی ہے۔ جو بھی ہمارے ساتھ ہو رہا ہے یہ قدرت کی طرف سے نہیں ہو رہی یہ ہمارے غلامی کی وجہ سے ہو رہی ہے۔ قدرت نے تو ہمیں بہت سی چیزیں دی ہے ہم بس اس کے لاحق ہو جائیں۔

Unemployment today is due to slavery, our people are dying due to diseases, the reason is slavery, the next day our people are dying due to road accidents, the reason is slavery, today there are wars between us, small pieces of land But slaughter is taking place because of slavery. Today there is no water in the houses because of slavery. Whatever is happening to us is not happening by nature, it is happening because of our slavery. Nature has given us so many things, let us just fall into it.

یہ سب غلامی کی وجہ سے ہو رہا ہے اسکی وجہ ہی غلامی ہے۔ ہمیں اصلی مرض کو دیکھنا چاہئے۔ تو ایک راستہ ہے ہمارے پاس اسکے علاوہ کچھ بھی نہیں ہے، اگر ہم امن چاہتے ہیں تو ہمیں جنگ لڑنی ہوگی۔ اگر ہم جنگ ختم کرنا چاہتے ہیں تو اسکے لئے بھی ہمیں ایک شدید جنگ لڑنی ہوگی، اپنے جنگ میں تیزی لانی ہوگی۔

All this is happening because of slavery, because slavery is the reason. We must look at the real disease. So there is a way, we have nothing but that, if we want peace, we have to fight. If we want to end the war, we have to fight a fierce battle for that too, to intensify our war.

یہ صرف ہم نہیں کہہ رہے یہ تاریخ کہہ رہی ہے۔ تاریخ کو کوئی دیکھے اور دیکھنے کیساتھ جانے اور سمجھے تو وہ اقوام جنہوں نے جنگیں لڑیں وہ زندہ ہوئے اور وہ اقوام جو خاموش ہوگئے، خوف کا شکار ہوئے وہ نہیں بچ سکے وہ بھی مر گئے فنا ہو گئے۔

It’s not just us who are saying it, history is telling it. If one looks at the history and understands it, then the nations which fought wars have come to life and those nations which have become silent, have become victims of fear, they have not survived, they too have perished.

آج تک ایسا نہیں ہوا کہ جو لوگ بزدل ہو گئے، خوف کا شکار ہوئے، لالچ کا شکار ہوئے وہ زندگی بھر بچے رہیں۔ آج تک ایسا تو نہیں ہوا ہے کہ قبرستانوں میں جتنے بھی لوگ دفن ہیں وہ بہادر تھے اور بزدل سبھی اس دنیا میں زندہ ہیں۔ بزدل بھی مریں ہیں۔

To this day, it has not happened that those who became cowards, became victims of fear, became victims of greed, remained children for life. To this day it has not happened that all the people buried in the cemeteries were brave and all the cowards are alive in this world. Cowards are dead too.

اس( جنگ) میں فرد مرینگے، کم تعداد میں یا ہزاروں کی تعداد میں مرینگے، لاکھوں کی تعداد میں مرینگے لیکن ہماری قوم بچ جائیگی، زمین بچ جائیگی۔

In this (war) individuals will die, in small numbers or in thousands, millions will die but our nation will survive, the earth will survive.

ہمیں اس چیز کے اوپر سوچنے، غور کرنے کی ضرورت ہے۔ جب بلوچستان تھا، ہمارا ملک تھا، ہماری سر زمین تھی، جب ہماری ریاست تھی، پاکستان کا نام و نشان بھی نہیں تھا، پاکستان کی کوئی بات نہیں تھی۔ آج ہم کیسے اور کس بنیاد پر کہہ سکتے ہیں کہ ہمارا اور اسکا رشتہ ہو؟ کس بنیاد پر؟ اگر مسلمانیت کی بات ہے تو جائے سعودی کے ساتھ خود کو ملائے۔ وہ مسلمانوں کا گڑھ ہے۔ اسلام وہی سے تو آیا تھا۔ سعودی کیوں پنجابی کو اپنا بھائی نہیں بناتا۔ پاکستان کو کیوں اپنا بھائی نہیں بناتا، کیوں نہیں کہتا آو ہم اور تم ساتھ مل جاتے ہیں آو میرے ملک، آو جاو اور ایک ہو جاتے ہیں۔ بلوچ کے اوپر یہ مصیبت کیوں مسلط کی گئی ہے۔

We need to think about this. When there was Balochistan, there was our country, there was our land, when there was our state, there was no name or symbol of Pakistan, there was no question of Pakistan. How and on what basis can we say today that we have a relationship with him? On what basis? When it comes to Islam, join Saudi Arabia. It is a stronghold of Muslims. That is where Islam came from. Why Saudis do not make Punjabi their brother. Why don’t you make Pakistan your brother, why don’t you say come we and you get together, come my country, come and become one. Why this trouble has been imposed on Baloch?

آج وہ ہم سے کیوں سوال کرتا ہے، ہمارے اور باتیں بناتا ہے، کیوں ہمیں بتاتا ہے کہ کہاں سے کیا لا رہے ہو، کیسے جنگ لڑ رہے ہو۔ کبھی کہتا ہے افغانستان ان کو مدد دے رہا ہے کبھی کہتا ہے انڈیا انکو مدد دے رہا ہے کبھی کہتا ہے کہ اسرائیل انکو مدد دے رہا ہے۔ ہم واضح انداز میں کہتے ہیں، ہم صاف بات کہتے ہیں، ہم سیدھی زبان میں کہتے ہیں کہ ہمیں آج کوئی بھی کچھ بھی نہیں دے رہا ہے۔ ہم مدد مانگتے ہیں اور جب ہمیں دینگے اس دن ہم بتا بھی دینگے، اعلانیہ طور پر بتائینگے۔

Why does he question us today, make us talk more, tell us where you are coming from, how you are fighting. Sometimes he says Afghanistan is helping them, sometimes he says India is helping them, sometimes he says Israel is helping them. We speak plainly, we speak plainly, we say plainly that no one is giving us anything today. We ask for help and when they give it to us, we will tell it, we will tell it publicly.

تم کون ہوتے ہو یہ کہنے والے کہ یہ فلاں جگہ پر بیٹھے ہوئے ہیں، وہاں افغانستان میں بیٹھے ہوئے ہیں، یہ انڈیا میں بیٹھے ہوئے ہیں یہ اسرائیل میں بیٹھے ہوئے ہیں، یہ امریکہ میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ بلوچ جہاں بھی رہے تم کون ہوتے ہو، تمہیں کس نے حق دیا ہے؟ ہم جہاں بھی جائیں، بیٹھیں چھپانے والی بات نہیں ہے کہ ہمارا اور تمہارا کوئی رشتہ ہی نہیں ہے۔ تمہارے رشتے کو ہم نے مانا ہی نہیں ہے، تمہاری حاکمیت ہم نے مانی ہی نہیں ہے۔ آج ہم جہاں بھی بیٹھے، چاہے جا کر افغانستان میں بیٹھیں، ہمارا اور انکا بہت پرانا رشتہ ہے، جہاں بھی جا کر بیٹھیں، دنیا کے کسی بھی کونے میں جا کر بیٹھیں، پنجابی کون ہے اور پاکستان کون ہے، کس بنیاد پر ہمیں یہ سب کہتا ہے۔

Who are you to say that they are sitting in some place, they are sitting in Afghanistan, they are sitting in India, they are sitting in Israel, they are sitting in America. Baloch, wherever you are, who are you, who has given you the right? Wherever we go, it is no secret that you and I have no relationship. We have not accepted your relationship, we have not accepted your sovereignty. Today, wherever we sit, no matter where we go and sit in Afghanistan, we and they have a very old relationship, wherever we go, sit in any corner of the world, who is Punjabi and who is Pakistan, on what basis do we know this? Everyone says

ہم نے اسے قبول ہی نہیں کیا ہے۔ یہ تاریخ بتا رہا ہے تاریخ ثابت کرتی ہے دنیا ثابت کرتی ہے کہ بلوچ و بلوچ قوم نہیں مانتی اسے، پاکستان کو قبول نہیں کرتی، اسکی حاکمیت نہیں مانتی۔ یہ بزور طاقت آئی ہے اور اگر آج ہمارے پاس اتنی طاقت نہیں تو کل ضرور ہوگی، کل ہم بھی ضرور ایک طاقت ہونگے۔

We have not accepted it. This history is telling. History proves that the world proves that Baloch and Baloch people do not accept it, do not accept Pakistan, do not accept its sovereignty. It has come by force and if we do not have that much power today, then tomorrow it will be, tomorrow we will also be a power.

نظریہ کے لحاظ سے فکر کے لحاظ سے حوصلے کے لحاظ سے بلوچ نوجوانوں میں کوئی کمی نہیں ہے اگر ہے تو وہ بے وسائلی ہے۔ آج بلوچ بے وسائلی کے باوجود یہاں تک پہنچا ہے اس جگہ پر (جہد کو) پہنچایا ہے جس دن بلوچ کے ہاتھوں میں طاقت آئی یہ ( پاکستان) خود کو سنبھال نہیں پائیگا۔ یہ اپنے پاوں نہیں سنبھال پائیگا، آج بلوچ نے اس جگہ اسے لا کھڑا کیا ہے۔

In terms of ideology, in terms of thought, in terms of morale, there is no shortage of Baloch youth, if any, then they are helpless. Today Baloch has reached this place in spite of its helplessness. It has brought this (struggle) to this place. The day power came in the hands of Baloch, it (Pakistan) will not be able to handle itself. It will not be able to handle its feet, today Baloch has brought it to this place.

آج اگر کوئی آٹھ کر یہ کہتا ہے کہ یہ لوگ (سرمچار) مال اور مڈی کے لئے، آسودگی کے لئے اور پیسے کے لئے یہ سب کر رہے ہیں تو ہم صرف اتنا کہتے ہیں، اپنے ان بلوچوں سے کہتے ہیں، پنجابی اور پنجابی کے دلالوں کے پروپیگنڈوں کا ہم جواب نہیں دیتے بلکہ اپنے ان بلوچوں سے کہتے ہیں کہ آیا کیا آپ لوگ پیسے کے لئے، پیسے کی خاطر اپنے گھروں کو ایک مہینے کے لئے چھوڑ سکتے ہیں؟ اگر فکر نہ ہو نظریہ نہ ہو ان پہاڑوں میں آکر رہ سکتے ہیں ان پہاڑوں میں دوڑ دھوپ کر سکتے ہیں؟ تو پھر کون پاگل ہے کون ناداں ہے جو اپنے جان کی بازی لگائے ور اپنے جان کا شرط لگائے اور اٹھ کھڑا ہو اور کہے یہ مجھے تھوڑے سے پیسے ملینگے؟ کوئی اتنا پاگل اتنا ناداں نہیں ہے۔

Today, if anyone says that these people (Sarmachar or Freedom Fighters) are doing all this for wealth and comfort, for comfort and money, then we only say this, we say to our Balochs, and Punjabi, We do not respond to the propaganda of brokers but ask our Balochs if you can leave your homes for a month for money. If there is no worry, there is no ideology, can you come and live in these mountains, can you run in these mountains? Then who is mad, who is ignorant, who risks his life and bets his life and gets up and says that I will get some money? No one is so crazy, so ignorant.

آیا اگر آج کوئی کھڑا ہو کر یہ بولے کہ یہ جذباتی ہیں یہ نہیں سمجھتے تو اس عمر میں کوئی ایسا نہیں ہے کہ جذباتی ہو جائے۔ یہ جذبات نہیں یہ حقائق ہیں، یہ سب حقائق ہیں، یہ سب ہم جانتے ہیں، سب سمجھتے ہیں۔ درد آئے تکلیف آئے، اپنے لوگوں کی حالت دیکھ رہے ہیں، اپنے قوم کی حالت دیکھ رہے ہیں کہ دو وقت کی روٹی کے لئے پریشان ہیں کہ کل کا اپنا کھانا کیسے لاونگا اور وسائل بھی دیکھ رہے ہیں اپنے۔ کتنا وسائل لیکر جا رہے ہیں یہ (پاکستان ) بے دردی کے ساتھ لیکر جا رہی ہیں انکو بھی دیکھ رہے ہیں ہم۔

If today someone stands up and says that they are emotional, they don’t understand it, then there is no one in this age who can be emotional. These are not emotions, these are facts, these are all facts, we all know, all understand. They are in pain, they are looking at the condition of their people, they are looking at the condition of their nation, they are worried about how they will get their food tomorrow and they are also looking at their resources. We are also looking at how much resources they (Pakistan) are carrying away ruthlessly.

لاٹھیاں بھی پڑ رہی ہے ( بلوچ قوم کو)، بے عزت بھی کر رہے ہیں، نہ ننگ کا لحاظ کرتے ہیں نہ ناموس کا لحاظ کر تے ہیں، نا عورتوں کا خیال کرتے ہیں، بچوں کو بھی مارتے ہیں، ہمارے بہن، بچیوں کو رلانے ہیں، زار و قطار ہے انکی سڑکوں پر، کیا ہم ان آنسوؤں کو بھول سکتے ہیں؟ کس بنیاد پر بھول سکتے ہیں؟ ہاں اگر ضمیر مر جائے تو بھول جائینگے، دیکھینگے، دیکھتے رہینگے، اور آگے بھی دیکھتے ہی رینگے اور یہ (پاکستان) ہمیں آگے بھی دکھاتا رہیگا۔

They are also beating the sticks (to the Baloch nation), they are also disrespecting them, they do not care about shame or dishonor, they do not care about women, they do not care about children, they kill our sisters and daughters. There are tears, there are lines on their streets, can we forget these tears? On what basis can you forget? Yes, if the conscience dies, we will forget, we will see, we will keep seeing, and we will continue to see and it (Pakistan) will continue to show us.

آج بلوچستان یونیورسٹی میں جو سکینڈل ہوتا ہے، یہ اپنی راہ ہموار کر رہا ہے۔ ان دنوں کے لئے راہ ہموار کر رہا ہے جو بنگال میں کیا گیا تھا۔ آج یہ ہمیں دیکھ رہا ہے، جو بھی کر رہا ہے ہمیں دیکھ رہا ہے کہ کل یہ چیزیں ہمارے ساتھ کرے۔ لاکھوں کی تعداد میں زیادتیاں ہوئیں۔ آج یہ یہی سوچ رہا ہے، ہمارے مزاحمت کو دیکھ رہا ہے۔ تو کیا ہم پہلے سے ہی تیاری نہ کر لیں؟ کیا ان سب سے پہلے ہم اس جنگ میں شامل نہ ہو جائیں؟ یا پھر نہیں، تماشائی بنے رہیں اور دیکھتے رہیں اور غور کریں کہ کس کی بہن چلی گئی، کس کی ماں آج چلی گئی، کل کس کی باری ہے۔ ہم کم سے کم یہ نہیں کر سکتے ہیں۔

The scandal that is taking place in Balochistan University today is paving its way. Is paving the way for what was done in Bengal these days. Today it is watching us, whatever it is doing, it is watching us to do these things with us tomorrow. There were millions of abuses. That is what he is thinking today, looking at our resistance. So shouldn’t we prepare in advance? Shouldn’t we be the first to join this war? Or not, just be a spectator and watch and consider whose sister is gone, whose mother is gone today, whose turn is tomorrow. At least we can’t do that.

ہم نہیں کرتے اور ہم سے یہ کام نہیں ہوتا، اس سے پہلے یا تو دشمن رہیگا یا ہم۔ اس دن کے آنے سے پہلے ہم آپ سب سے یہی توقع رکھتے ہیں اور یہ امید کرتے ہیں۔ اور وہ دن ضرور آئیگا، اس دن کے آنے سے پہلے آئیں ایک ہو جائیں اور مل کر اپنی لڑائی آگے لیکر جائیں۔

We don’t and we don’t do this, before that either the enemy will remain or we will. This is what we all expect from you before this day comes. And that day will surely come. Before that day comes, let’s unite and carry on our fight together.

ہم جنگ میں شامل ہوں پھر چاہے وہ جو کرے وہ دشمن ہے وہ کرسکتا ہے۔ اس سے خیر کی اچھائی کی امید نہ پہلے تھی نہ اب ہے۔ تو پھر ہم مل جائیں اور ایک ساتھ مقابلہ کریں۔ جو بھی اسکے ایجنٹ ہوئے ہیں، اسکے کتے بنے ہوئے ہیں، بھونک رہے ہیں، بلوچ کے اوپر تحریک کے اوپر، جہدکاروں کے اوپر، شہیدوں کے اوپر، انکو ہم بس اتنا کہتے ہیں کہ تمہاری اوقات کیا ہے؟ تمہاری حیثیت کیا ہے، پنجابی کے سامنے؟ بلوچ کے سامنے تو ویسے بھی ( تمہارے اوقات اور حیثیت ) کچھ بھی نہیں ہے، پنجابی کے سامنے کیا حیثیت ہے تمہاری؟ یہ جس کو اپنا محسن کہتے ہیں ڈاکٹر قدیر خان کو اسکی کیا حیثیت بنا ڈالی اسکی کیا اوقات بنا ڈالی، سڑکووں پر روتا تھا، تو پھر تم جیسے دلالوں کی کیا حیثیت ہوگی اسکے سامنے۔ تمہیں تو وہ اچھے سے پہچانتا ہے کہ تم اپنے قوم کے نہیں ہوئے اسکے کیا ہونگے۔ تم اپنے ہمسایہ کے نہیں ہوئے، اپنے گھر کے نہیں ہوئے۔ وہ تمہیں اچھے سے پہچانتا ہے اسکے سامنے تمہاری کیا اوقات ہے؟ تمہاری حیثیت اسکے سامنے کیا ہے؟

If we join the war, then whatever the enemy does, he can do. The hope of goodness from this was neither before nor now. Then let’s get together and compete together. All those who have become its agents, have become its dogs, are barking, on the movement against the Baloch, on the fighters, on the martyrs, we just call them what is your time? What is your status in front of Punjabi? There is nothing in front of Baloch (your times and status) anyway, what is your status in front of Punjabi? What is the status of Dr. Qadeer Khan? Who is called as his Mohsin? He knows you well that you are. What will happen to him if he does not belong to his people? You did not belong to your neighbor, you did not belong to your house. He knows you well. What time do you have in front of him? What is your status in front of it?

اسکو خود جانو خود پہچانو، اسکو لوگ سمجھیں کہ اس راستے پر چلنا ہے۔ آج یہ سمجھ آتی ہے، ہماری لڑائی پہچان میں آتی ہے۔ فرق ہے اس میں، فرق ہے اس میں کہ ہمارا کوئی بلوچ مارا جاتا ہے، شہید ہوتا ہے، اپنی جان قربان کرتا ہے ہم سینہ تان کر اعلانیہ کہتے ہیں کہ ہمارے اتنے ساتھی شہید ہوئے ہیں، فلاں ساتھی شہید ہوا ہے۔ اسکی ماں کھڑی ہوتی ہے باپ کھڑا ہوتا ہے، فخر کے ساتھ کہتے ہیں کہ ہمارا بیٹا اس راہ میں شہید ہوا ہے۔ کیوں کسی مخبر کے گھر والے نہیں کہتے؟ کیوں اسکا خاندان نہیں کہتا؟ کیوں بات نہیں کرتے؟ وہ تو چھپاتے ہیں۔ کیوں وہ (پاکستان) اپنے فوجیوں کا نہیں بتاتا؟ وہ تو چھپاتے ہیں۔ اگر حق کی لڑائی لڑ رہے ہیں تو بتائیں۔ ناجائز اور جھوٹ کی جنگ ہے انکو حقیقت معلوم ہے کہ انکا حوصلہ ٹوٹ جائیگا، بے حوصلہ ہو جائینگے۔ جتنے بھی مارے جاتے ہیں وہ (پاکستان فوج) چھپاتا ہے کہ دوسرے (اہلکار) بے حوصلہ نہ ہو جائیں میڈیا کے ذریعے۔ ہم تو بتاتے ہیں اور اس لئے بتاتے ہیں کیونکہ ہماری جنگ حق کے لئے جنگ ہے، جائز جنگ ہے۔ ہمارے چھ ساتھی مارے جائیں، آٹھ مارے جائیں دس مارے جائیں ہم بتاتے ہیں ہم فخر کرتے ہیں انکے اوپر لیکن وہ اپنے (مارے جانے،والے) لوگ چھپاتا ہے۔ ہمارے ساتھیوں کی بہنیں، مائیں، باپ ان پر فخر کرتے ہیں۔ اس سے صاف ظاہر ہوتا ہے، مطلب وہ مانتے ہیں کہ انکا بیٹا اس جہد میں شامل رہا ہے۔

Get to know him, let him know that people have to follow this path. Today it makes sense, our fight is recognizable. There is a difference in this, there is a difference in that one of our Balochs is killed, martyred, sacrifices his life. His mother stands up and his father stands up, proudly saying that our son has been martyred in this way. Why don’t the family of an informant say? Why doesn’t his family say? Why don’t you talk? They hide. Why doesn’t he (Pakistan) tell about his soldiers? They hide. Tell us if you are fighting for the truth. There is a war of illegitimacy and lies. They know the truth that their spirits will be broken, will be encouraged. He (Pakistan Army) hides those who are killed so that others (officials) do not get discouraged through the media. We tell and we tell because our war is a war for truth, a legitimate war. Six of our comrades should be killed, eight should be killed, ten should be killed. We say we are proud of them but he hides his (killed) people. Our fellow sisters, mothers, fathers are proud of them. This clearly means that he believes that his son has been involved in this struggle.

کسی مخبر کے گھر والے نہیں بولتے کیونکہ انہیں پتہ ہے غلط کام ہے۔ اس فرق کو ہم سمجھیں، ہم جان جائیں کہ، اسکا جاننا ضروری ہے۔ یہ سب چیزیں، آج ہم کوئی بات کہتے ہیں، ہم آپکو بتا رہے ہیں کہ ہم ان چیزوں سے گزر چکے ہیں اور گزر رہے ہیں اور گزرینگے۔

The family of an informant does not speak because they know it is wrong. Let us understand this difference, let us know that, it is important to know. All these things, today we say something, we are telling you that we have gone through these things and are going through and will go through.

پہلے کوئی کہتا تھا کہ یہ جذباتی ہیں، انکا شوق ہے، دھوکہ کھا گئے ہیں، گمراہ ہوئے ہیں، آج تو کوئی یہ نہیں کہیں۔ ان سب چیزوں سے ہم گزر چکے ہیں اس سے سخت حالات ہم پر آئینگی، آگے بھی آئینگی، لیکن ہم کہتے ہیں کہ ہم ان سب کے لئے تیار ہیں۔ ہم کہتے ہیں ہماری سر زمین، ہماری قوم نہ ہارے، ہماری شناخت کا خاتمہ نہ ہو، اور سب بندھے ہوئے ہیں اس جنگ سے۔ تو جنگ کو منظم بنائیں، مضبوط جنگ لڑیں اس دشمن کے خلاف، کمزور جنگ نہ لڑیں۔ مضبوط جنگ لڑیں اور اسکے لئے خود کو تیار کریں۔ اسکے لئے خود کو ذہنی حوالے سے، جسمانی حوالے سے، ہر حوالے سے، قربانی کے حوالے سے، خون پسینے کے حوالے سے خود کو تیار کریں تب ہم اپنی قوم کو بچاسکتے ہیں۔ اس سر زمین کو، اس دھرتی کو، اس زبان کو، اس ثقافت کو، سب کو بچا سکتے ہیں ورنہ یہ سب ہمارے ہاتھ سے چلا جائیگا۔ انکو ہم تیز تقاریر سے نہیں کر سکتے ہیں۔ اس یلغار کو روکنے کے لئے ہم کہتے ہیں کہ شعوری جنگ نوجوان لڑ رہے ہیں، نوجوانوں کا ساتھ دیں انکا حوصلہ بنیں، انکے مددگار بنیں انکی حمایت کریں، چار قدم انکے ساتھ چلیں، یہ دشمن خود کو نہیں سنبھال پائیگا۔

Someone used to say that they are emotional, they have a hobby, they have been deceived, they have gone astray, today no one says that. We have gone through all these things, difficult situations will come upon us, will come, but we say that we are ready for all of them. We say our land, our nation should not lose, our identity should not end, and all are bound by this war. So organize the war, fight a strong war against this enemy, do not fight a weak war. Fight a strong fight and prepare yourself for it. For this, prepare yourself mentally, physically, in every respect, in terms of sacrifice, in terms of blood and sweat, then we can save our nation. On this earth We can save this land, this language, this culture, everyone, otherwise it will all go out of our hands. We can’t do them with fast speeches. In order to stop this invasion, we say that the youth are fighting a war of consciousness.

This freedom Struggle by Baloch People against Occupying Pakistan has reached streets of Balochistan.

Children read a song written in support of Baloch national leader Dr Allah Nazar Baloch at a school function in western Balochistan.

Hundreds of students of Quaid-e-Azam University protested last week for release of Baloch student Hafeez Baloch. Hafeez was taken away by secretive agencies from Khuzdar earlier this week and remains missing.

Points to Ponder

While Students are doing their protests against occupying Pakistani Forces in a democratic way, will more youth join the armed freedom struggle against Punjabi Pakistan on the call given by the Balochistan Liberation Army Commander In Chief Basheer Zeb?

Will United Nations Human Rights Council listen to the calls of Human Rights Abuses by Pakistan Army in Balochistan and call for a referendum in Balochistan and declare Balochistan a Free and Independent Nation?

Previous Article Khan of Kalat of Balochistan seeks UN help to Free Pakistan Occupied Balochistan and hold Referendum There

Follow us at:-
Twitter Handle: @newscomworld
Twitter Handle for Hindi : @NewsWorldHindi
Telegram Handle : @NewsComWorldCom
Koo Handle : @NewsComWorld
GETTR Handle: @NewsComWorld
Parler Handle: @NewsComWorld
Tooter Handle: @NewsComWorld
YouTube Channel https://www.youtube.com/channel/UCnKJQ3gFsRVWpvdjnntQoAA

 1,842 total views

shares